We are committed to reporting the facts and in all situations avoid the use of emotive terms.

بریکنگ نیوز
english logo

پنجاب کے ہر ڈویژن میں عالمی معیار کی یونیورسٹی ہوگی، وزیر ہائرایجوکیشن پنجاب

پنجاب کے ہر ڈویژن میں عالمی معیار کی یونیورسٹی ہوگی، وزیر ہائرایجوکیشن پنجاب

لاہور(یو این این)وزیر ہائر ایجوکیشن راجہ یاسر ہمایوں سرفراز کا کہنا ہے کہ ہائر ایجوکیشن کا تعلق کوالٹی ایجوکیشن سے ہے، ہمیں صرف ڈگریاں نہیں بانٹنی بلکہ کوالٹی ایجوکیشن کو بھی یقینی بنانا ہے۔ معیار تعلیم بہتر کرنے سے ہی پاکستانی یونیورسٹیز کی ڈگریوں کو عالمی سطح پرتسلیم کیا جائے گا۔ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر نے لاہور میں پہلی عالمی ریکٹر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انکا کہنا تھا کہ کوالٹی ایجوکیشن کے لئے ضروری ہے کہ وائس چانسلرز کو با اختیار کیا جائے اور ان کی شفاف انداز میں تعیناتی کی جائے۔حکومت نے اس ضمن میں واضح پالیسی اپنائی ہے۔ کالجز اور جامعات کی سطح پر سیاست کو ختم کرکے ہی کارکردگی میں بہتری لائی جا سکتی ہے۔ بعد ازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ اگلے سال جون تک ایجوکیشن پالیسی پر کام مکمل ہو جائے گا جبکہ تعلیمی میدان میں اصلاحات کا سلسلہ جاری رہے گا۔ ایجوکیشن پالیسی 5 سالوں میں تعلیمی اصلاحات سے متعلق بنیاد فراہم کرے گی۔ حکومت اس دوران ماڈل کالج تعمیر کرے گی جس کے لئے موجودہ بجٹ میں رقم مختص کی گئی ہے۔ آہستہ آہستہ تمام کالجز میں ماڈل کالجز کی طرز پر اصلاحات کی جائیں گی۔ پنجاب کی کوئی یونیورسٹی کیو ایس اوکی عالمی رینکنگ کے مطابق 500بہترین یونیورسٹیز میں شامل نہیں ہے، حکومت پنجاب کے ہر ڈویژن میں عالمی معیار کی یونیورسٹی بنانے یا پہلے سے موجود یونیورسٹیز کا معیار بہتر کرنے کا ادارہ رکھتی ہے ۔انکا کہنا تھا کہ نصاب کو سٹینڈرڈائز کرنے کی ضرورت ہے۔ پرائیویٹ اور سرکاری جامعات میں پڑھائے جانے والے مضامین کے نصاب میں مطابقت ہونی چاہیئے، پہلے دو سال ایک جیسا کورس پڑھایا جائے جبکہ اگلے دو سالوں میں طلبہ کو مختلف مضامین کے انتخاب کا اختیار ہو۔ ایک سوال کے جواب میں صوبائی وزیر کا کہنا تھا تعلیمی اداروں سے سیاست کو ختم کرنے کی ضرورت ہے، وزیر اعظم عمران خان نے سرکاری اداروں میں سیاسی بنیادوں پر تعیناتی کے خلاف مہم چلائی اور تحریک انصاف کی حکومت اس پر قائم ہے۔ طلبہ یونین کا تصور ہمارے تعلیمی اداروں میں غلط انداز میں پیش کیا جاتا ہے۔ صوبائی وزیر نے وضاحت کرتے ہوئے بیاتا کہ سرچ کمیٹی میں نجی یونیورسٹی کے ممبران کی شمولیت کو غلط انداز میں پیش کیا گیا، سرکاری تعلیمی اداروں کے فیکلٹی ممبرز ہمارے لئے انتہائی قابل احترام ہیں ان کی جانب سے دی جانے والی تجاویز پر غور کیا جائے گا اور اہم فیصلوں میں ان کی مشاورت کو شامل کیا جائے گا۔

Translation

اداریہ

آج کی تصویر

مقبول ترین

Whatsapp نیوز سروس

Advertise Here

ضرورت نمائیندگان

روزنامہ جواب

ضرورت نمائیندگان

Coverage

Currency

WP Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com