We are committed to reporting the facts and in all situations avoid the use of emotive terms.

بریکنگ نیوز
english logo

پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل صوبائی پالیسی بورڈ سے ادارے تباہی کی طرف جائیں گے ، ینگ ڈاکٹرز ایوسی ایشن

پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل صوبائی پالیسی بورڈ سے ادارے تباہی کی طرف جائیں گے ، ینگ ڈاکٹرز ایوسی ایشن

ٹیچنگ ہسپتالوں کے معاملات چلانے کے لیئے بھی پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل بورڈ آف گورنرز کے نام پر انتظامی بورڈ تشکیل دیا جا رہا ہے
ملازمین کا سول سرونٹس کا درجہ اور حقوق ختم کر دیئے جائیں گے، کے پی کے کی طرح اپنے لوگوں کو بھاری تنخواہوں پر نوازا جائے گا
پہلے سے موجود انتظامی افسران کو ہی انتظامی اور مالی خود مختاری دی جائے تاکہ ہیلتھ سیکرٹریٹ پر انحصار کم سے کم ہو، شدید تحفظات کا اظہار
لاہور (یو این این ) ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن میو ہسپتال لاہورنے پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت کی طرف سے ٹیچنگ ہسپتالوں میں مجوزہ میڈیکل ٹیچنگ انسٹی ٹیوشن اینڈ ریفارمز ایکٹ پر تحفظات کا اظہار کیا ہے ۔ ایکٹ میں پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل ایک صوبائی پالیسی بورڈ تشکیل دیا جارہا ہے ،اس ایکٹ سے ادارے بہتری کی بجائے تباہی کی طرف جائیں گے۔ترجمان ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن نے کہا ہے کہ ٹیچنگ ہسپتالوں کے معاملات چلانے کے لیئے بھی پرائیویٹ لوگوں پر مشتمل بورڈ آف گورنرز کے نام پر انتظامی بورڈ تشکیل دیا جا رہا ہے۔سرچ اینڈ نومینیشن کونسل میں پرائیویٹ لوگوں کو شامل کیا جا رہا ہے جو بورڈ آف گورنرز کے ممبران کے لیئے نام تجویز کریں گے،پرائیویٹائزیشن اور اد اروں میں سیاسی مداخلت کو قانونی راہ دی جارہی ہے۔ملازمین کا سول سرونٹس کا درجہ اور ان کے حقوق ختم کر دیئے جائیں گے، کے پی کے کی طرح اپنے لوگوں کو بھاری تنخواہوں پر نوازا جائے گا۔چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار نے کچھ عرصہ پہلے کے پی کے میں بورڈ آف گورنر تحلیل کر دیئے تھے کیونکہ اداروں میں کرپشن کا انکشاف ہوا تھا۔اداروں کا انتظامی سٹرکچر پہلے سے موجود ہے جس میں بہتری لائی جاسکتی ہے،ڈپٹی میڈیکل سپرینٹینڈنٹس،اے ایم ایس ،آ ئی ٹی،فنائنس،سپورٹ سروسز جس میں صفائی،سیکیورٹی و غیرہ کے ڈائریکٹرز ہیں وہ پہلے سے موجود ہیں اور ایم ایس کو جواب دہ ہیں اور نظام کافی حد تک بخوبی کام کر رہا ہے اور اس کو انفارمیشن ٹیکنالوجی پر شفٹ کرنے کی ضرورت ہے۔ترجمان نے مزید کہا ہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان کے احکامات کی روشنی میں ہسپتالو ں کے معاملات بہتر چلانے کے لئے ڈاکٹرز کا انتظامی کیڈر بنایا جائے۔ڈاکٹرز کے انتظامی کیڈر کو سول سروس کی طرز پر انتظامی اورمالی اداروں سے اضافی ٹریننگ کروائی جائے کیونکہ بطور ڈاکٹرز وہ ہسپتالوں کیمعاملات زیادہ بہتر انداز میں سمجھ سکتے ہیں اور ان کے لئے جزا اورسزا کا نظام وضع کیا جائے۔پہلے سے موجود انتظامی افسران کو ہی انتظامی اور مالی خود مختاری دی جائے تاکہ ہیلتھ سیکرٹریٹ پر انحصار کم سے کم ہو، اس ایکٹ سے پرائیویٹ انشورنس کمپنیوں کے لیئے راہ ہموار کی جارہی ہے، بورڈ آف گورنرز کی صورت میں سفید ہاتھیوں کی فوج بھرتی کی جائے گی۔کنٹریکٹ پر سپیشلسٹ بھرتی کرنے سے پوسٹ گریجویشن کا نظام تباہی کی طرف جائے گا جس کا مظاہرہ کے پی کے میں ہو چکا ہے، کے پی کے میں پچھلے 6 ماہ سے ینگ ڈاکٹرز کو تنخواہیں نہیں مل رہی ہیں حالانکہ وہاں انتظامی اور مالی خود مختاری کا نظام رائج ہے۔
حکومت وقت سے در خواست کی جاتی ہے کہ محکمہ صحت کو مزید تجربات سے نہ گزارا جائے، جو غریب علاج افورڈنہیں کر سکتے وہ آہستہ آہستہ ہیلتھ کارڈکے نام پر مفت علاج سے محروم کر دیئے جائیں گے کیونکہ ہیلتھ کارڈ میں موجود ایک خاص رقم ہی خرچ کی جا سکے گی۔کے پی کے میں ایکٹ میں دوبارہ ترامیم کی جارہی ہیں کیونکہ پرانا ایکٹ نافذ کرنے سے مسائل ابھی تک حل نہیں ہوئے۔میو ہسپتال میں ایک نیا مینیجمنٹ کیڈر کا ماڈل لاگو ہے جسے پورے پنجاب میں پھیلایا جائے، سپریم کورٹ کے احکامات کی روشنی میں ہسپتالوں کی مینیجمنٹ بہتر بنانے کے لیئے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی تھی جس نے اپنی سفارشات جمع کرا دی ہیں اوران سفارشات پر عمل کیا جائے نہ کہ ایم ٹی ایکٹ نافذ کیا جائے۔

Translation

اداریہ

آج کی تصویر

مقبول ترین

Whatsapp نیوز سروس

Advertise Here

ضرورت نمائیندگان

روزنامہ جواب

ضرورت نمائیندگان

Coverage

Currency

WP Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com