We are committed to reporting the facts and in all situations avoid the use of emotive terms.

بریکنگ نیوز
english logo

ملک میں فضائی آلودگی کوروکنے کے لئے جلد الیکٹرک کاریں چلیں گی، امین اسلم

ملک میں فضائی آلودگی کوروکنے کے لئے جلد الیکٹرک کاریں چلیں گی، امین اسلم

گزشتہ پانچ سالوں میں بالخصوص لاہور اورملک بھر میں بیشمار درخت اکھاڑے گئے جس سے آلودگی کا مسئلہ شدت اختیار کرگیا
جنوبی ایشیاء فضائی آلودگی کا ہاٹ سپاٹ ،آنے والی نسلیں متاثر ہورہی ہیں، مشیر وزیراعظم برائے ماحولیات کی پریس کانفرنس
لاہور(یو این این )ملک امین اسلم مشیر وزیراعظم برائے ماحولیات نے کہا ہے کہ دنیا میں فضائی آلودگی کے باعث 2018کے دوران 70لاکھ اموات رپورٹ ہوئیں جن میں60فیصد اموات براعظم ایشیا میں ہوئیں۔ فضائی آلودگی کا ہاٹ سپاٹ جنوبی ایشیا ہے جس میں آنے والی نسلیں متاثر ہورہی ہیں۔فضائی آلودگی کے تدارک کے لئے عالمی اور علاقائی سطح پر اقدامات کئے جارہے ہیں،وہ پیر کے روز حکومت کی 100روزہ کارکردگی پرڈی جی پی آر آفس میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے ۔ان کا کہنا تھا گزشتہ پانچ سالوں میں بالخصوص لاہور شہراورملک بھر میں بیشمار درخت اکھاڑے گئے جس کی وجہ سے آلودگی کا مسئلہ شدت اختیار کرگیا۔تحریک انصاف کی موجودہ حکومت نے فضائی آلودگی کے مسئلے کو سنجیدگی سے لیا اور ایک کمیٹی قائم کردی جس نے میڈیم ٹرم اور لانگ ٹرم اقدامات تجویز کئے ہیں۔ ملک امین نے کہا کہ گزشتہ سالوں میں کوئی فعال مانیٹرنگ سٹیشن موجود تھا نہ فضائی آلودگی اور ایئرکوالٹی انڈکس کا کوئی ڈیٹا موجود تھا۔موجودہ حکومت نے برسراقتدارآتے ہی مشینری کو آپریشنل کیا اور لاہور میں خصوصی طور پر 2پوائنٹ مانیٹرنگ سٹیشن قائم کئے۔ ایک واہگہ اور دوسرا جیل روڈ پر قائم کیا گیاجو 5کلومیٹر کے اطراف میں ایئرکوالٹی انڈکس کی ریڈنگ کررہے ہیں۔یہ ڈیٹا روزانہ کی بنیاد پر محکمہ ماحولیات کی ویب سائٹ پر اپ لوڈ کیا جارہا ہے۔موجودہ حکومت نے فضائی آلودگی کا سبب بننے والے چندذرائع کی نشاندہی کی ہے۔ بھٹوں کا پرانی ٹیکنالوجی پرچلنا، دھواں چھوڑنے والی گاڑیاں اور انڈیا میں کسانوں کا دھان کی فصلوں کو جلانا شامل ہیں۔ تحریک انصاف کی حکومت نے بھٹہ مالکان سے مل کرریڈ زون قائم کیا جس کے تحت 2ماہ بھٹے بند رہے۔بھٹوں کی مسلسل مانیٹرنگ کی گئی، 4ہزار بھٹوں کا چالان کیا گیا اور350بھٹے بند کئے گئے۔ پائلٹ پراجیکٹ کے تحت ایک بھٹہ زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقل کیا گیا جو کہ شیخوپورہ کے نزدیک فنکشنل ہے۔موجودہ حکومت ملک میں 10ہزار بھٹوں کو 2020کے آخر تک زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقل کردے گی۔صوبہ پنجاب کے چند اضلاع اور بالخصوص لاہور میں 85سے90فیصد فضائی آلودگی ہندوستان میں فصلوں کی جلانے سے ہوتی ہے۔گزشتہ 100دنوں میں دھواں چھوڑنے والی گاڑیوں کے خلاف ایکشن لے کر 18ہزار کا چالان کیا گیا جس کے تحت 85لاکھ کا جرمانہ وصول کیا گیا۔ موجودہ حکومت وزارت پٹرولیم کی مشاورت سے کم کوالٹی کے فیول کو بہتر کوالٹی کا فیول متعارف کرا رہی ہے۔ملک میں بہت جلد فضائی آلودگی کوروکنے کے لئے جلد الیکٹرک کاریں چلیں گی۔

Translation

اداریہ

آج کی تصویر

مقبول ترین

Whatsapp نیوز سروس

Advertise Here

ضرورت نمائیندگان

روزنامہ جواب

ضرورت نمائیندگان

Coverage

Currency

WP Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com